کرونا وائرس کے غریب اور نچلے متوسط طبقہ پر ممکنہ اثرات

کرونا وائرس کے غریب اور نچلے متوسط طبقہ پر ممکنہ اثرات

Media Category: Print
Media Organization: NawaiWaqt
By: zulqarnainhundal

ڑی معاشی طاقتیں اور بڑی بزنس شخصیات بھی متاثر ہو رہی ہیں۔ امیر حلقوں اور ترقی یافتہ ممالک کے پاس کھونے کو بہت کچھ ہے اور ایسی آفات کے بعد شاید سنبھلنے کی سکت بھی موجود ہو۔

لیکن طبقاتی تقسیم میں غریب تر، غریب حتی کہ نچلے متوسط طبقے ان آفات کی آبناکیوں سے زیادہ متاثر ہوتے ہیں۔

عالمی غربت 2018کے اعداو شمار کے مطابق دنیا میں36فیصد لوگ انتہائی غربت کی زندگی بسر کر رہے ہیں۔ دنیا بھر میں اس وبائی صورتحال میں کروڑوں لوگوں کو غذائی قلط کا سامنا درپیش ہو سکتا ہے ۔پاکستان بھر میں چھ کروڑ لوگوں کے متاثر ہونے کا خدشہ موجود ہے۔۔اکثریت خاص کر غریب طبقہ مناسب تعلیم ،معیاری صحت اور غذائی ضروریات سے محروم ہو رہا ہے۔

Nominated Work

قدرتی آفات اور وبائیں بلا تفریق اپنا کام کرتی ہیں۔اس میں رنگ ،نسل حتی کہ مذہب کی تفریق بھی شامل نہیں، یہی وجہ ہے کہ اکثر کلیسے،مندر،مسجدیں اور دیگر مذہبی مقامات ویران ہیں۔میکدوں اور دیگر تفریحی جگہوں پر تالے ،بارڈر سیل، پروازیں معطل اور بازار بند ہیں۔کرونا وائرس دنیاوی عالمی طاقتوں امریکہ، روس ،چائنہ، جرمنی اور فرانس سمیت 180سے زائدترقی یافتہ و پذیر ممالک میں پھیل چکا ہے ۔


Click Here To View The Nominated Work
Click Here To View The Nominated Work