افغانستان میں بدترین معاشی بحران

عالمی طاقتوں کے اس خطے میں اس قدر دیرینہ مفادات وابستہ ہیں کہ وہ افغانستان کو اتنا مجبور کرنا چاہتے ہیں کہ اگر جنگ سے سرنگوں نہیں کرسکے تو پھر معاشی جنگ مسلط کرکے انہیں زیر نگیں کرلیا جائے۔ افغان طالبان نے مکمل اقتدار تو حاصل کرلیا لیکن عالمی طاقتوں کے مطالبات ماننے سے انکار کررہے ہیں، ان کی پالیساں بادی ئ النظر تبدیل تو نظر آئیں لیکن انہوں نے بھی زمینی حقائق کا درست اندازہ نہیں لگایا کہ انہیں کسی نہ کسی معاملے میں قدرے لچک دکھانا ہوگی، گو کہ کسی بھی ملک کے داخلی معاملات میں کسی بھی ملک کو مداخلت کا کوئی حق نہیں ہے لیکن جہاں دوحہ مذاکرات کے نتیجے میں کئی معاملات میں لچک کا مظاہرہ کیا وہاں ان امور کو بھی سمجھنے کی ضرورت تھی کہ ان کی پوزیشن فی الوقت ایسی نہیں کہ وہ معاشی طور پر پورے ملک کی سرکار کو بغیر جائز آمدن کے چلا سکیں گے، انہیں ماضی میں جن ممالک سے مالی امداد ملا کرتی تھی اب ان کا رویہ اور پالیسی بھی واضح طور پر تبدیل ہوچکی ہے اور قدامت پسندی سے جدیدیت کی جانب رواں عرب ممالک میں ان برسوں میں بڑی تیزی سے تبدیلیاں آچکی ہیں، انہوں نے عرب ممالک کو بھی نظر انداز کیا جس کا نتیجہ سامنے آرہا ہے کہ اب انہیں ملک کی معیشت کے لئے بیرونی امداد پر انحصار کرنا ہوگا

SEE NOMINATION →
How Security Threats Keep Hazara Students From Pursuing Higher Education In Balochistan

Quetta in the northern part of the province is the capital city of conflict-ridden Balochistan (making 43% of Pakistan’s total territory), bordering Iran and Afghanistan. Though the province is less populated in comparison to rest of the three provinces, it is mineral-rich and has strategic and economic importance due to its longer coastal belt in the Arabian Sea. The strategic importance of the region is heightened by the China Pakistan Economic Corridor (CPEC) projects, which have brought about criticism from the United States. Baloch separatists have expressed their concerns about CPEC too, raising the stakes in the regional tussle. The 2017 census indicates that the city has a population of 2.2 million people. Of these, the National Commission of Human Rights states that “approximately 0.5 million” are Hazara Shi’ite Muslims – the majority of whom live in the capital city’s Mariabad and Hazara town regions. Meanwhile the Shi’ite Conference claims that from 1999 to date, 2,683 Shi’ite Hazaras have lost their lives, while the National Commission for Human Rights in a 2018 report states that in the last 14 years more than 2,000 Hazara Shi’ites were killed in the sectarian militant attacks. These circumstances and life threats have proven to be major hurdles in the way of Hazara students pursuing higher education

SEE NOMINATION →