دمکتی اسکرین بچوں کی بصارت نگل رہی ہے

نیلے آسمان پر ستاروں کے جھرمٹ میں چمکتا چاند، قوس قزح کے رنگوں میں نہاتا سورج یہ سب حسین نظارے آنکھ ہی سے دکھائی دیتے ہیں۔ آنکھیں انسانی جسم کا ایک ایسا حصہ ہیں جن کا ذکر طب سے زیادہ شعر و ادب کی کتابوں میں ملتا ہے۔ یہی آنکھیں بن کہے بہت کچھ کہہ جاتی ہیں، یہی آنکھیں ہمیں سب سے زیادہ دھوکا دیتی ہیں۔ ایک طرف صحرا میں چمکتے پانی کی جھلک دکھاتی ہیں، تو دوسری جانب نخلستان کو صحرا کے روپ میں پیش کرتی ہیں۔ آنکھیں نعمت خداوندی ہیں لیکن ہم میں بہت سے والدین دانستہ و نادانستہ طور پر اپنے بچوں کو اندھیروں کی طرف دھکیل رہے ہیں۔ ہم اس بات کا مشاہدہ کسی بھی تقریب میں کرسکتے ہیں، جہاں بچہ تھوڑا سا رویا، تھوڑی ضد کی، والدین فوراً جیب سے موبائل نکال کر بچوں کے ہاتھ میں تھما دیتے ہیں۔ بچے کیا دیکھ رہے ہیں یہ ایک الگ معاملہ ہے، قابل توجہ بات یہ ہے کہ ان کا اسکرین ایکسپوژر کتنا اور کتنے نزدیک سے ہے، عموماً دیکھا گیا ہے کہ بچے موبائل کی برائٹنیس کو فُل کرکے محض دو انچ کے فاصلے پر گھنٹوں یوٹیوب پر ویڈیو یا کوئی گیم کھیل رہے ہوتے ہیں۔ لیکن والدین اس اہم مسئلے کو قطعی طور پر نظر انداز کرتے ہوئے اپنے معمولات میں مشغول رہتے ہیں۔ بینائی خدا کی دی ہوئی لامحدود نعمتوں میں سے ایک ہے، لیکن ان آنکھوں میں جب تک روشنی ہے ، اس وقت تک آپ کے بچوں کی زندگی میں رنگ ہیں۔ اپنے بچے کا مستقبل محفوظ بنانے کے لیے آج ہی پہلا قدم اٹھائیں، اس کا اسکرین ٹائم کم سے کم کریں، اسے موبائل گیمز کے بجائے ایسے کھیلوں کی ترغیب دیں جس میں جسمانی سرگرمی زیادہ ہو۔

SEE NOMINATION →
Parveen Bibi\’s story: Selling for money and then she became the victim of forced marriage

Parveen was a divorced lady from Faisal Abad, having a boy from her first marriage. She was sold at the age of 28 years and sent to South Punjab. She was uneducated and unskilled.. One of her family members dodged her in the name of earning money in some other city . She was forced to marry the man who purchased her for 60, 000 rupees . She was forced to remain locked at home. She was not allowed to go out in the village. She was not allowed to meet other women. She gave birth to two girls. She spent her youth in a lurch and away from her family. Her son was in Faisal Abad, to whom she was not allowed to meet. In 2010 , her time changed with the arrival of flood . The whole village was collapsed. Different organizations arrived to help the people there. They gathered women there, to help and restore their lifestyles and help them financially. They conducted awareness and self growth training for them, So Parveen husband was forced to give permission to her to be involved in those sessions because he had his own financial interest. She was awarded animals to earn her livelihood. The crisis brought out an opportunity for her, she reshaped herself, she became confident, she started mobilizing people, she became a community leader and started changing behaviours of her locality. So her contribution makes women more empowered and independent. yet she has the desire to meet her son one time in life and it\'s so painful.

SEE NOMINATION →